اشاعتیں

December, 2012 سے پوسٹس دکھائی جا رہی ہیں

جہان نو کی بنیاد اس طرح تعمیر کر جاؤ

جہانِ نو کی بنیاد اس طرح تعمیر کر جاؤ
کہ اپنا نام پہلی اینٹ پر تحریر کر جاؤ

تمہارے شعر اگر تلوار بن سکتے نہیں تم سے 
تو اپنے فن کو اپنے پاؤں کی زنجیر کر جاؤ

فقط سانسوں کی گنتی ہی کو جینا تو نہیں کہتے 
کوئی اک واقعہ تو قابل تحریر کر جاؤ

محبت میں وفا کے لفظ کا مفہوم مشکل ہے 
مبادا تم کوئی آسان سی تعبیر کر جاؤ​
شاعر: ضمیر جعفری