اشاعتیں

August, 2012 سے پوسٹس دکھائی جا رہی ہیں

اخلاق کے اِیوان کی تعمیر ہے روزہ

روزہ

اخلاق کے اِیوان کی تعمیر ہے روزہ
بنیاد ِخرافات کی تدمیر ہے روزہ

جس میں نہ ریا ہے نہ کوئی مکر نہ دھوکا
اس حسنِ عبادت کی یہ تصویر ہے روزہ

شیطان تو انسان کا دشمن ہے پرانا
شیطان کا زندان ہے زنجیر ہے روزہ

وہ روح کا ہو یا کہ مرض ہو وہ جسَد کا
ہر ایک مرض کے لیے اکسیر ہے روزہ

جو دل کہ مچلتا ہے گناہوں پہ ہمیشہ
اس دل کے لیے نسخۂ تسخیر ہے روزہ

روزہ سے ضیا ملتی ہے قلب اور نظر کو
مومن کے لیے چشمۂ تنویر ہے روزہ 

کافی ہے وہ روزے کے فضائل کی ضمانت
جس شان سے قرآن میں تحریر ہے روزہ

جس نفس کی اصلاح کا امکان نہ ہو عاجز
اس نفس کی اصلاح کی تدبیر ہے روزہ


عبدالرحمن عاجز مالیر کوٹلوی

جو ان کی سیرت میں ڈھل گیا ہے دلیل و برہان ہو گیا ہے

وہ ﷺ آ گئے ہیں تو زندگی کا نظام آسان ہو گیا ہے
انہی کے صدقے میں آدمی آپ اپنی پہچان ہو گیا ہے

جو ان کی سیرت میں ڈھل گیا ہے دلیل و برہان ہو گیا ہے
علیؓ و عثمانؓ بن گیا ہے بلالؓ و سلمانؓ ہو گیا ہے

برس گئے ہیں وہ زندگی پر حقیقتوں کا سحاب بن کر
ہم اپنی ہستی سمجھ گئے ہیں خدا کا عرفان ہو گیا ہے

نہ کوئی کالا رہا نہ گورا نہ کوئی ادنی رہا نہ اعلی
اضافتوں سے بلند و بالا وجودِ انسان ہو گیا ہے

جو ان سے منسوب ہو گئی ہے وہ بات ایمان بن گئی ہے
جو ان کے ہونٹوں پہ آ گیا ہے وہ لفظ قرآن ہو گیا ہے


شاعر: حکیم سید محمود احمد سرو سہارنپوری  انتخاب از ’’ ثنائے خواجہ ﷺ ‘‘