اللہ کا شکر ہے!

جہاز ميں عملہ تھا ہم تھے يا ايك انڈونیشی نوجوان، ہمارے ليے وہ واحد غير ملكى تھا کہ جس سے گفت وشنيد کے بہانے ہم سب تلاش كرتے رہتے تھے۔ نہ وہ ہماری زبان سمجھے نہ ہم اس کی، گویا:
زبان يار من تركى ومن تركى نمى دانم
(ميرے دوست كى زبان تركى ہے اور مجھےتركى نہیں آتی)
البتہ وہ عربى كے کچھ الفاظ كہہ کر اپنا ما في الضمير بيان كر ديا كرتا تھا ۔
پوچھا کہ انڈونیشیا کیسا ملک ہے؟
كہنے لگا: في مسلم كثير الحمد للہ، وفي مساجد كثير الحمد للہ، ۔۔۔وفي سينما كثير الحمد للہ !
( مسلمان بہت ہیں اللہ كا شكر ہے، مسجديں بہت ہیں اللہ كا شكر ہےاور سينما بہت ہیں اللہ كا شكر ہے ! )

اقتباس ڈاکٹر صھیب حسن کے سفر نامہ " ابن بطوطہ ہوا کرے کوئی " سے۔

تبصرے

مقبول ترین تحریریں

محبت سب کے لیے نفرت کسی سے نہیں

کیا جزاک اللہ خیرا کے جواب میں وایاک کہنا بدعت ہے؟

استقبال رمضان کا روزہ رکھنے کی ممانعت

احسن القصص سے کیا مراد ہے؟ سورۃ یوسف حاصل مطالعہ

جھوٹے لوگوں کی ہر بات مصنوعی ہوتی ہے۔ سورۃ یوسف حاصل مطالعہ

مسجد کے بارے میں غلط خبر دینے پر برطانوی ذرائع ابلاغ کی بدترین سبکی

MUHAMMAD ( Sallallahu alaihi wa sallam)

تمہارے لیے حرام، میرے لیے حلال

حب رسول

قصيدة _ انتظار، من الشعر الأردي المعاصر