مرے خدا نے مجھے کتنا سرفراز کیا

مرے خدا نے مجھے کتنا سرفراز کیا 
میانِ اہلِ ہوس مجھ کو بے نیاز کیا 

تری نگاہ سے اسلوب خامشی سیکھا 
اور اپنے آپ کو اہلِ خبر میں راز کیا

تمام عمر مروت کی نذر کر ڈالی 
ہمیشہ خود سے بچا دوسروں پہ ناز کیا

جہاں بھی ذکر چھڑا تری ہمرہی کا وہیں 
ہمی نے سلسلہ گفتگو دراز کیا

جو اشک عزم مری آنکھ تر نہ کر پائے 
انہی سے شام و سحر میں نے دل گداز کیا 


عزم بہزاد 


تبصرے

مقبول ترین تحریریں

محبت سب کے لیے نفرت کسی سے نہیں

کیا جزاک اللہ خیرا کے جواب میں وایاک کہنا بدعت ہے؟

استقبال رمضان کا روزہ رکھنے کی ممانعت

احسن القصص سے کیا مراد ہے؟ سورۃ یوسف حاصل مطالعہ

جھوٹے لوگوں کی ہر بات مصنوعی ہوتی ہے۔ سورۃ یوسف حاصل مطالعہ

مسجد کے بارے میں غلط خبر دینے پر برطانوی ذرائع ابلاغ کی بدترین سبکی

MUHAMMAD ( Sallallahu alaihi wa sallam)

تمہارے لیے حرام، میرے لیے حلال

حب رسول

قصيدة _ انتظار، من الشعر الأردي المعاصر