ندائیہ




یہ تنکوں کی کھاٹ اور کاغذ کی کشتی

لکیروں کا خاکہ ۔۔۔

وہی دید و آواز کی بات لہروں سے بنتے ہوئے ۔۔۔

واقعے کا تماشا ۔۔۔۔۔ تماشے کی نقلیں ۔۔۔

وہی خشک تختی پہ املاء کا لکھنا

ہتھیلی سے پونچھی ہوئی تیرگی کی سلیٹوں پہ ۔۔۔

چوبیس تک کے پہاڑے کی مشقیں

وہی زِچ کی حالت میں خواب وحقیقت کے مہرے !

یہ نظمیں یہ غزلیں ۔۔۔۔

تصور کے چوگان میں فکر وجذبہ کے گنجے سواروں کی بازی !

زبان وبیاں کے طاقوں میں چلتی ہوئی ۔۔۔

تاش، کیرم ، سنوکر کی کھیلیں ،

یہ بازیچہ ء روزوشب ہے یہاں ۔۔۔

کتنا کھیلو گے؟ کیا کھیلتے ہی رہو گے ؟


بڑے ہو گئے ہو
آفتاب اقبال شمیم

تبصرے

مقبول ترین تحریریں

کیا جزاک اللہ خیرا کے جواب میں وایاک کہنا بدعت ہے؟

محبت سب کے لیے نفرت کسی سے نہیں

استقبال رمضان کا روزہ رکھنے کی ممانعت

احسن القصص سے کیا مراد ہے؟ سورۃ یوسف حاصل مطالعہ

جھوٹے لوگوں کی ہر بات مصنوعی ہوتی ہے۔ سورۃ یوسف حاصل مطالعہ

مسجد کے بارے میں غلط خبر دینے پر برطانوی ذرائع ابلاغ کی بدترین سبکی

تمہارے لیے حرام، میرے لیے حلال

اپنی مٹی پہ ہی چلنے کا سلیقہ سیکھو !

درس قرآن نہ گر ہم نے بھلایا ہوتا

حب رسول